کاروبارکیجئے
تحریر: عبداللہ بن زبیر
قسط نمبر : 36
(اس قسط کو سابقہ قسط نمبر 62 کے ساتھ ملا کر پڑھاجائے)
سرمایہ کاری کے بارے میں سوچئے
اس وقت کاروبار شروع کرنے کے لئے سب سے جو بڑی رکاوٹ بیان کی جاتی ہے وہ ہے سرمایہ کی کمی — جب سرمایہ نہ ہو تو کاروبار کا تصور محال ہے لیکن اگر اپنی کمپنی کو ہدف بنا لیا جائے تو سرمایہ کا حصول مشکل نہیں کیونکہ کمپنی کے لئے کئی افراد کی سرمایہ کاری ایک ساتھ جمع ہونے کی صورت میں بزنس اچھے طریقہ سے ہو سکتا ہے ، اگر چند افراد ساتھ مل جائیں تو سرمایہ کاری کوئی مسئلہ نہیں — لیکن یہ ضرور دیکھنا چاہئے کہ جو لوگ ساتھ مل رہے ہوں ان کے پاس کچھ نہ کچھ سرمایہ ضرور موجود ہو۔
کاروباری ذہن کے حامل افراد تلاش کیجئے
کاروبار اور ذہانت ایک دوسرے کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں ، اگر سبھی یکساں ذہن کے حامل ہوں تو کاروبار بہتر طریقہ سے ہو سکے گا اور کمپنی بہت جلد اپنا نام بنا لے گی ، لیکن کمپنی کی شروعات سے پہلے ایسے افراد کا ہونا ضروری ہے جن کا ذین کاروباری ہو اور جن کے پاس سرمایہ بھی ہو ، یہ افراد مقامی آبادی ، دوستوں کی فہرست اور سوشل ذرائع استعمال کرتے ہوئے بھی تلاش کئے جا سکتے ہیں یہاں یہ بات مد نظر رہے کہ پارٹنرز ایسے ہوں جن کے پاس متعلقہ ہنر یا سرمایہ ہو اس کے بغیر کسی کو بھی شامل نہ کیجئے ، ابتدا میں بہت سے لوگ تیار ہوتے ہیں پھر سنجیدہ افراد الگ ہوتے جاتے ہیں اور غیر سنجیدہ نکلتے جاتے ہیں ، اس طرح بہت جلد آپ اپنا ہدف پورا کر سکتے ہیں —
پہلی میٹنگ کمپنی کی بنیاد ہے
کسی بھی کمپنی کے لئے تمام افراد کے درمیان باہمی اعتماد ایک لازمی امر ہے اور اعتماد ملاقاتوں کے بعد ہی ممکن ہے ، جب سرمایہ کاری کے لئے تیار کاروباری لوگوں کی مطلوبہ تعداد پوری ہوجائے تو ایک جگہ پہلی میٹنگ لازمی ہے جہاں ایک دوسرے کے ساتھ تعارف بھی ہوجائے اور پیش آمدہ مسائل وسائل اور شروعاتی مراحل کی پلاننگ پہ بھی گفتگو ہو جائے ، کیسے ہوگا ؟؟ کاروبار کون سا کیا جائے گا ؟؟ پروڈکٹ کون سی منتخب کی جائے گی ؟؟
ورک کب سے شروع کیا جائے گا ؟؟ کس جگہ مناسب رہے گا یہ اور اس طرح کے بیسیوں سوالات کے جوابات اس پہلی میٹنگ سے جڑے ہیں ، ہر ایک کا تمام معاملات پہ اتفاق ضروری ہے ، ہو سکتا ہے پہلی میٹنگ کے بعد بھی کچھ لوگ آپ کے ساتھ سرمایہ کاری کا ارداہ ختم کر بیٹھیں لیکن گھبرانا نہیں متبادل تلاش کرتے رہئے اور کوشش کیجئے کہ مطلوبہ تعداد 50 ہے تو آپ کی میٹنگ میں 70 لوگ ہوں تاکہ کوئی پیچھے ہٹ جائے تو آپ کے پاس متبادل ہو–
پروڈکٹ کا انتخاب کیسے ؟؟
کمپنی کے وجود کے لئے آواز بلند کرنے والے شخص کے اندر مہارت اور صلاحیت اضافی ہوتی ہے، اس لئے آپ کا ریسرچ ورک پہلی میٹنگ سے قبل ہی مکمل ہونا چاہئے کہ کون سی ایسی پروڈکٹ ہے جس کو آپ لے کر چل رہے ہیں ؟؟ مینو فیکچرنگ کریں گے یا پیکنگ اور سپلائی ؟؟ اس وقت بھی ہزاروں ایسی پروڈکٹس ہیں جن کو آپ اپنے انداز سے چلا سکتے ہیں ، بس مہارت اور جذبہ درکار ہے ، تنہا بیٹھ کر خوب سوچئے کہ مارکیٹ کی کون سی ضرورت بہتر انداز سے پوری نہیں ہو پارہی ہے اگر ایسی پروڈکٹ پہ آپ کی نظر ٹک جاتی ہے تو اس کی کھوج کریں ، کون بنا رہا ہے ؟؟ کہاں سے سپلائی مل رہی ہے ؟؟ ریٹس کیا ہیں ؟؟ آپ کیسے کم ریٹ دیں گے ؟؟ مارجن کتنا ہے ؟؟ کتنے لوگ درکار ہوں گے ؟ خرچ کتنا ہوگا ؟ سپلائی کیسے ہوگی ؟؟ پوائنٹ کہاں بنے گا ؟؟ ابتدائی اخراجات کون سے ہوں گے یہ اور اس طرح کے بیسیوں سوالات ہیں جن کے جوابات آپ نے مارکیٹ سے تلاشنے ہیں اس کام میں اپنے ممبران کو زیادہ سے زیادہ شریک کیجئے اور پیپر ورک مکمل کرنے کے بعد آگے بڑھئے —
دوسری میٹنگ پلان کیجئے
سرمایہ کار بھی مل گئے ، پروڈکٹ بھی ہاتھ لگ گئی ، پیپر ورک بھی مکمل ہوگیا اب آپ نے دوسری میٹنگ کرنی ہے اور آپس میں ایک لائحہ عمل طے کرنا ہے ، کمپنی کے نام پہ سوچ و بچار کرکے اسے فائنلائز کرنا ہے ، کمپنی کی باڈی تشکیل دینی ہے ، بورڈ آف ڈائریکٹرز کا قیام عمل میں لانا ہے ، سرمایہ کب کیسے اور کہاں جمع کروانا ہے اس بارے فیصلہ کرلینا ہے اور ساری چیزیں فائنل کرنے کے بعد اگلے مرحلے کی طرف بڑھنا ہے —
انفرادیت کیا رکھنی ہے ؟؟
مارکیٹ میں مقابلہ کی فضا ہے ، ہر ایک سبقت لے جانا چاہتا ہے ، ایک سے بڑھ کر ایک مارکیٹ میں باوا آدم ہے ، سبھی بزنس کے ٹائیکون — آپ جس طرف جا رہے ہیں وہ راستہ پھولوں سے نہیں کانٹوں سے اٹا ہوا ہے ، آپ نے کون سی انفرادیت دینی ہے کہ لوگ آپ کی پروڈکٹ کو ترجیح دیں ، انفرادیت کی ایک طویل فہرست بنائیے جس میں دیگر کمپنیوں کی پروڈکٹ کے نقائص ( جو موجود ہوں ) اور اپنی پروڈکٹ کے فیچرز لکھنے ہیں تاکہ آپ لوگوں کو بتاسکیں کہ آپ دوسروں سے بہتر کیسے ہیں ؟ یہی خوبی آپ کی کامیابی اور ناکامی کی وجہ بنے گی —
کمپنی کی قانونی حیثیت
سرمایہ ، پروڈکٹ اور انفرادیت کے بیچ آپ نے قانونی طور پہ دستاویزات کو بالکل نہیں بھلانا ، ہر کمپنی کے لئے اس کی قانونی حیثیت اس کے وجود کو ممتاز کرتی ہے ، کمپنی کے وجود سے پہلے کمپنی کا ڈھانچہ تخلیق کرنا ہے جس کے لئے را مٹیریل کمپنی کا قانونی وجود ہے ، دنیا کے دیگر ممالک کے مقابلے میں کمپنی کی رجسٹریشن کے حوالےسے پاکستانی گورنمنٹ کے قوانین انتہائی نرم ہیں ، اس کے لئے آپ کو ایک لیگل ایڈوائزر کی ضرورت پڑے گی جس کی معقول فیس ہے ، کمپنی کی قانونی حیثیت آپ کی ایک شناخت ہوتی ہے جس کے بل بوتے پر آپ مقابلہ کی فضا میں خود اعتمادی کے ساتھ کھڑے ہوتے ہیں – عام طور پہ کمپنی کی رجسٹریشن SECP کے تحت ہوتی ہے 3 سے 4 ماہ کے پراسس میں آپ کی کمپنی کا نام لیگلائز ہوجائے گا ، نام بھی ایسا ہو جو پہلے کسی کے زیر استعمال نہ ہو اور نام کی موجودگی ویب سائٹ پہ چیک
کی جاسکتی ہے-
کمپنی کے لئے درکار دستاویزات
اس بارے میں وکیل آپ کو رہنمائی دے گا تاہم مختصرا یوں سمجھ لیجئے کہ 12 سے 20 افراد کی کمیٹی کا مکمل ڈیٹا مع شناختی کارڈز کی مصدقہ نقول ، بورڈ آف ڈائریکٹرز کی تفصیل ، تمام ممبران کے الیکٹرانک دستخط اور موجود سرمایہ کی اسٹیٹمنٹ درکار ہوگی ، یہ مکمل فائل چار نقول اور متعدد اسٹامپ پیپرز سمیت بذریعہ وکیل رجسٹرار کے پاس جمع ہوگی اور ایک پراسس کے بعد آپ کو آگاہ کردیا جائے گا-
کمپنی کام کیسے شروع کرے گی ؟؟
کمپنی کی رجسٹریشن کے دوران ہی بنیادی کام شروع ہوجائیں گے جیسے ورک اسٹیشن کس جگہ ہوگا ؟ لیبر کون سی ہوگی ؟ را مٹیریل کہاں سے آئے گا ؟ سپلائی کون دے گا ؟ آفس کی سیٹنگ کہاں ہوگی ؟ ان ساری چیزوں کو پورا کرنے کے لئے جہاں سرمایہ درکار ہے وہیں پر شخصی محنت بھی چاہئے ہوگی تاکہ سارا نظام بہتر سے بہتر انداز میں ہو سکے-
کمپنی کے لئے کتنا سرمایہ درکار ہوتا ہے ؟
کمپنی کے لئے درکار سرمایہ کی دو نوعیتیں ہیں ، ایک وہ سرمایہ جو اسٹیٹ بینک میں بطور زر ضمانت رکھوانا ہے دوسرا وہ کیپیٹل جو خام مال اور سروسز کی فراہمی کے لئے درکار ہے، اس کا تعلق ویسے تو آپ کی نیچر آف پروڈکٹ سے ہے ، اگر آپ کی پروڈکٹ عام اور سادہ ہے تو زیادہ سرمایہ درکار نہیں لیکن بنیادی تخمینہ یہ ہے کہ کم ازکم تین ملین تک کی رقم درکار ہوسکتی ہے جس میں سے %50 SECP کے تحت اسٹیٹ بینک میں جمع ہوگی اور باقی %50 سے سروسز کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا ، اس لئے یہ آپ پہ منحصر ہے کہ آپ نے کس قسم کی پروڈکٹ منتخب کی ہے اور اس کے لئے کتنا سرمایہ درکار ہوسکتا ہے ؟؟ ویسے کمپنیز میں رقم ملین روپوں میں انویسٹ ہوتی ہے یہ کام لاکھوں کا نہیں ہے–
مینو فیکچرنگ پلانٹ
عام طور پہ کمپنیز اپنے مینو فیکچرنگ پلانٹ خود بناتی ہیں کیونکہ اپنی برانڈنگ میں ہی تو بچت ہے لیکن اگر مینو فیکچرنگ پلانٹ نہ بھی لگایا جائے تو چھوٹی سطح پہ کام ہو سکتا ہے اب یہ فیصلہ آپ پہ منحصر ہے کہ اپنی سرمایہ کاری کو مد نظر رکھتے ہوئے پلانٹ لگاتے ہیں اپنی برانڈنگ کرتے ہیں یا پھر بنی بنائی چیزوں کو ترجیح دیتے ہیں –
عملہ کہاں سے آئے گا ؟
موجودہ دور کمپیوٹرائزڈ ہے ، ہر چیز کمپیوٹر پہ منتقل ہوچکی ہے ، درجنوں انسان مل کر جو کام کرتے تھے اب وہ کمپیوٹر سے باآسانی ایک فرد کرسکتا ہے ، سب سے پہلے کمپنی کے شراکت داران سے یہ پوچھا جاتا ہے کہ ان میں سے کون سے لوگ سرمایہ اور سروسز دے سکتے ہیں ؟؟ جو سرمایہ کے ساتھ سروسز بھی دے سکتے ہوں منافع میں ان کے لئے کچھ حصہ اضافی بھی رکھاجاسکتا ہے–
(باقی آئندہ )

Published On: July 15th, 2021 / Categories: Blog /

Subscribe To Receive The Latest News

Subscribe our newsletter to get latest news right in your inbox.

Thank you for your message. It has been sent.
There was an error trying to send your message. Please try again later.

Add notice about your Privacy Policy here.